حسن کی فتنہ گری افسون، پارینہ ہوئی ۔ عاشقی کے ولولے بھی طاقِ نسیاں ہو گئے

خوشہ شاعری

انجم عثمان

15697999_635104023328743_8369264460927002828_n

میں تو سمجھی تھی حریفِ باد و باراں ہو گئے
اشک تو آسودہ دامانِ مژگاں ہو گئے

اب کہاں کشف، معارف ہائے سوزِ شاعری
سب طلسمات،سخن مجھ سے گریزاں ہو گئے

اک الوہی لے پہ تھی رقصاں یہ ساری کائنات
ساعتِ محشر میں سب اجزاءپریشاں ہو گئے

حسن کی فتنہ گری افسون، پارینہ ہوئی
عاشقی کے ولولے بھی طاقِ نسیاں ہو گئے

حاشیے وہ خیمہ شب کے چراغوں کے سبھی
بستہ برداران، صبح سے پریشاں ہو گئے

پردہ دار، بے نوایان،شبِ ہجراں تھے لب
ان کہے جو رنج تھے آنکھوں سے عریاں ہو گئے

جب نہ ٹوٹا رشتہ ہائے منصبِ دیوانگی
کیف و کم فرزانگی کے مجھ پہ ارزاں ہو گئے

تھا قیامت خیز تیرا ہجر ،سو ہم عاشقاں
ہم نشینِ موجہ خاکِ پریشاں ہو گئے

تم ہو معبودِ مجازی !لیکن اس کا کیا علاج !
جتنے سجدے تھے جبیں میں ،صرفِ یزداں ہو گئے

دکھ نہیں ترکِ مراسم کا مجھے انجم مگر
وقتِ رخصت رنج کیوں رخ پہ نمایاں ہو گئے !

Facebook Comments