حنا امبرین طارق: ایسا ہے گرفتار محبت کا مری وہ۔۔۔دیوانہ سا ہو جائے مری ایک نظر سے

حنا امبرین طارق طویل عرصے سے بیرون ملک مقیم ہیں۔ غیرممالک میں رہنے والوں کی مصروفیات کی طرح ان کا وقت بھی انتہائی مصروف گزرتا ہے ، ڈاکٹر حنا امبرین طارق پیشہ ورانہ مصروفیات کے ساتھ ساتھ امور خانہ داری، بچوں اور شوہر کی ذمہ داریوں کے ساتھ ساتھ وہ شعروشاعری کے لیے بھی وقت نکال لیتی ہیں کیو نکہ شاعری ان کی فطرت میں بسی ہے، ان کے مزاج کا حصہ ، وہ صرف شعر ہی نہیں کہتیں ادبی تقریبات میں بھی باقاعدہ شرکت کرتی ہیں۔

 

مرے خواب کو بھی رسائی ملے یہی زندگی کا ثمر ہے جناب ڈاکٹر حنا امبرین طارق

                                                                                  مرے خواب کو بھی رسائی ملے
                                                                                     یہی زندگی کا ثمر ہے جناب
                                                                            ڈاکٹر حنا امبرین طارق

شخصیات ویب کے قارئین حنا امبرین طارق کے نام اور کلام سے خوب واقف ہیں خوشہ شاعری میں ان کا کلام پہلے بھی پڑھ چکے ہیں۔ اب وہ تازہ کلام کے ساتھ پھر حاضر ہیں۔ پڑھیئے

یہ شہر کہ وہ شہر جو روشن تھا ہمیشہ یاں خوف کوئی تھا نہ بشر ہی کو بشر سے ڈاکٹر حنا امبرین طارق

                                                                             یہ شہر کہ وہ شہر جو روشن تھا ہمیشہ
                                                                           یاں خوف کوئی تھا نہ بشر ہی کو بشر سے
                                                                                            ڈاکٹر حنا امبرین طارق

 حنا امبرین طارق کی تین غزلیں

 

محبت کا دل پر اثر ہے جناب

خزینے سبھی عقل کے باندھ کر تحیّر کی محفل سجی ہے ابھی ڈاکٹر حنا امبرین طارق

ڈاکٹر حنا امبرین طارق

محبت کا دل پر اثر ہے جناب
محبت جہاں ہے امر ہے جناب

کسی کو ابھی تک سنائی نہیں
غزل یہ مری مختصر ہے جناب

در و بام پر بھی ہیں پہرے لگے
عجب شہر یہ پر خطر ہے جناب

مرے خواب کو بھی رسائی ملے
یہی زندگی کا ثمر ہے جناب

چراغوں سے راہوں کو روشن کیا
بہت اب حسیں یہ سفر ہے جناب

سبھی شہر میں جس سے راضی ہوئے
یہاں پر وہی معتبر ہے جناب

بزرگوں کی جو قدر کر تا نہیں
جہاں میں وہی در بدر ہے جناب

٭٭٭

ڈاکٹر حنا امبرین طارق  کیینڈا میں  گزشتہ نئے سال کے موقع پر منعقدہ مشاعرے میں اپنا تازہ کلام سنا رہی ہیں یہ مشاعرہ کینیڈا کے ٹی وی ون نے ریکارڈ کیا

تسخیر ہے کرنا اسے اب دستِ ہنر سے

حنا امبرین طارق

تسخیر ہے کرنا اسے اب دستِ ہنر سے
لکھ کر کبھی ڈرنا نہیں اندھیر نگر سے

یہ شہر کہ وہ شہر جو روشن تھا ہمیشہ
یاں خوف کوئی تھا نہ بشر ہی کو بشر سے

بس موسمِ ہجراں ہی یہاں آ کے رکا ہے
وابستہ مگر وصل کی یادیں ہیں شجر سے

اس گھر سے مرا ربط اگر باقی نہیں ہے
رشتہ تو ہے گہرا مرا اپنوں کے نگر سے

ڈاکٹر حنا امبرین طارق

ایسا ہے گرفتار محبت کا مری وہ
دیوانہ سا ہو جائے مری ایک نظر سے

رقصاں تھے تری یاد کے سائے تو ہوا یوں
ہر لفظ ڈھلا شعر میں یادوں کے اثر سے

صحرا سے کوئی تشنگی آب تو پوچھے
گرزے کئی بادل ہیں یہاں سے بنا برسے

دل ایسی حویلی کہ ہیں تاریک دریچے
آہٹ نہیں آتی کسی دیوار نہ در سے

تجھ ایسے بتوں سے کیا حنا کوئی توقع
ہر روز دعا مانگی ہے ، تا ثیر کو ترسے

٭٭٭

اماوس نہیں چاندنی ہے ابھی

سبھی شہر میں جس سے راضی ہوئے یہاں پر وہی معتبر ہے جناب ڈاکٹر حنا امبرین طارق

ڈاکٹر حنا امبرین طارق

اماوس نہیں چاندنی ہے ابھی
گلوں میں بڑی دلکشی ہے ابھی

خزینے سبھی عقل کے باندھ کر
تحیّر کی محفل سجی ہے ابھی

وہ آنگن وہ بارش وہ گڑیا مری
یوں بچپن نے آواز دی ہے ابھی

یوں لوح ِ سخن پر، لکھے چند حرف
کہ جاں پر مری بن گئی ہے ابھی

تغافل کیا تو خطا بن گئی
پشیمان یہ زندگی ہے ابھی

٭٭٭

وہ آنگن وہ بارش وہ گڑیا مری یوں بچپن نے آواز دی ہے ابھی ڈاکٹر حنا امبرین طارق

                                                        وہ آنگن وہ بارش وہ گڑیا مری
                                                       یوں بچپن نے آواز دی ہے ابھی
                                                              

Facebook Comments