پاکستان اور سعودی عرب کے مابین متعدد معاہدوں، مفاہمتی یادداشتوں پر دستخط

پاکستان اورسعودی عرب نے توانائی،ریفائنری،پیٹروکیمیکل میں تعاون اورمعدنی وسائل کی ترقی سمیت مختلف معاہدوں اور مفاہمتی یادداشتوں پر دستخط کردیئے ہیں۔وزیراعظم ہاؤس میں وزیراعظم عمران خان سے سعودی ولی عہد محمد بن سلمان نے ون آن ون ملاقات کی۔ویراعظم ہاؤس میں ہونے والی ملاقات میں دوطرفہ تعلقات،خطے کی صورتحال،دہشتگردی کے خلاف جنگ سمیت مختلف امورپرتبادلہ خیال کیا گیا

پاکستان اورسعودی عرب نے توانائی،ریفائنری،پیٹروکیمیکل میں تعاون اورمعدنی وسائل کی ترقی سمیت مختلف معاہدوں اور مفاہمتی یادداشتوں پر دستخط کردیئے ہیں۔اتوار یہاں وزیراعظم ہاؤس میں وزیراعظم عمران خان سے سعودی ولی عہد محمد بن سلمان نے ون آن ون ملاقات کی۔ویراعظم ہاؤس میں ہونے والی ملاقات میں دوطرفہ تعلقات،خطے کی صورتحال،دہشتگردی کے خلاف جنگ سمیت مختلف امورپرتبادلہ خیال کیا گیاملاقات کے بعد پاک سعودی سپریم کوآرڈی نیشن کونسل کاافتتاحی اجلاس ہوا جس کی صدارت ولی عہد محمد بن سلمان اوروزیر اعظم عمران خان مشترکہ طورپر کی ۔جاری اعلامیہ کے مطابق اعلیٰ اختیاراتی کونسل کی تجویزعمران خان کے دورہ سعودی عرب میں دی گئی تھی۔ کونسل کامقصددوطرفہ معاہدوں اورفیصلوں پربروقت عملدرآمدممکن بناناہے۔کونسل میں خارجہ،دفاع،توانائی،دفاعی پیداواراورتجارت ،اطلاعات،ثقافت،داخلہ،سرمایہ کاری اورآبی وسائل کے وزراء شریک ہوئے ۔کونسل کے تحت اسٹیرنگ کمیٹی اورمشترکہ ورکنگ گروپس بھی قائم کئے گئے ،ورکنگ گروپس کامقصدمتعلقہ شعبوں میں وزراء کیلئے سفارشات تیارکرناہے،دونوں ممالک کے وزرائے خارجہ کونسل کے معاملات دیکھیں گے۔ بعد ازاں پاکستان اور سعودی عرب کے درمیان معاہدوں اور مفاہمت کی یادداشتوں (ایم او یوز) پر دستخط کی تقریب منعقد ہوئی جس میں وزیراعظم عمران خان اور سعودی ولی عہد بھی موجود تھے۔ دونوں ممالک کے وفود نے مختلف معاہدوں اور ایم او یوز پر دستخط کیے۔تقریب کے دور ان سب سے پہلے وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے اسٹینڈرڈائزیشن کے حوالے سے معاہدے پر سعودی وزیر کیساتھ دستخط کیے جس کے بعد وزیر بین الصوبائی رابطہ ڈاکٹر فہمیدہ مرزا نے سعودی وزیر نے نوجوانوں کے امور اور کھیلوں کے شعبے میں تعاون کے معاہدہ اور مفاہمتی یاد داشت پر دستخط کیے۔سعودی وزیر خارجہ عادل الجبیر اور وزیرخزانہ اسد عمر نے سعودی فنڈ ترقیات اور پاکستان کے درمیان توانائی کے شعبے میں مفاہمتی یاد داشت پر دستخط کیے۔ریفائنری اور پیٹروکیمیکل میں تعاون معدنی وسائل کی ترقی کے حوالے سے مفاہمتی یاد داشت پر سعودی وزیر خالد الفالح اور وزیر پیٹرولیم غلام سرور خان نے دستخط کیے۔خالد الفالح اور وزیر توانائی عمر ایوب کے درمیان مفاہمتی یاد داشت پر دستخط ہوئے۔دونوں ممالک نے بجلی کی پیداوار کے شعبے میں ایم او یو پر دستخط کیے گئے ۔ بعد ازاں وزیراعظم عمران خان کی جانب سے سعودی ولی عہد کے اعزاز میں عشائیہ دیا گیاعشائیے میں دونوں ممالک کے وفود ،وزراء اور آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ سمیت اہم شخصیات شریک تھیں ۔اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان نے کہا کہ پاکستان زبردست قیادت کے باعث روشن مستقبل رکھتا ہے،20 ارب ڈالر کی سرمایہ کاری کے معاہدوں کا پہلا مرحلہ مکمل کیا ہے پاکستان میں مزید سرمایہ کرینگے ۔تقریب سے وزیر اعظم عمران خان نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ پاکستانیوں کے لیے آج ایک عظیم دن ہے ، سعودی ولی عہد اور ان کے وفد کا پاکستان میں خیر مقدم کرتے ہیں، سعودی عرب ہمیشہ سے پاکستان کا دوست اور بھائی رہا ہے ، سعودی قیادت اور عوام ہمارے دلوں میں رہتے ہیں۔وزیر اعظم نے کہا کہ پچیس لاکھ پاکستانی سعودی عرب میں کام کرتے ہیں۔ وزیر اعظم نے کہا کہ یہ لوگ اپنے خاندانوں کو چھوڑ کر وہاں محنت مزدوری کے لیے جاتے ہیں اور وہ ان کے دل کے بہت قریب ہیں۔ وزیر اعظم پاکستان نے سعودی ولی عہد کی توجہ سعودی جیلوں میں قید پاکستانیوں کی طرف بھی دلوائی۔

Facebook Comments