افغان حکام نے پی آئی اے طیارے کو کابل ائیرپورٹ پر روک لیا

افغان حکام نے بغیر کسی وجہ کے پی آئی اے طیارے کو کابل ایئرپورٹ پر روک لیا اور مسافروں کو ہراساں کرنے کی کوشش کی تاہم بعد میں متعصبانہ رویہ اپناتے ہوئے اڑان کے لئے چھوٹا رن وے استعمال کرنے کی ہدایت۔

طیارے میں سوار ایک سو باسٹھ مسافرمحصور، طیارے کا وزن کم کرنے کا کہا لیکن قومی ایئرلائن کے کپتان نے مو¿قف اختیار کیا کہ کسی مسافر کو چھوڑ کرنہیں جاﺅں گا

شخصیات ویب نیوز
رپورٹ: سید ماجد علی
افغان حکام نے بغیر کسی وجہ کے پی آئی اے طیارے کو کابل ایئرپورٹ پر روک لیا اور مسافروں کو ہراساں کرنے کی کوشش کی تاہم بعد میں متعصبانہ رویہ اپناتے ہوئے اڑان کے لئے چھوٹا رن وے استعمال کرنے کی ہدایت کی۔اطلاعات کے مطابق افغان حکام کی پاکستان دشمنی سامنے آگئی ، کابل ایئرپورٹ پر قومی ایئرلائن پی آئی اے طیارے کو اڑان بھرنے سے روکے رکھا اور مسافروں کو ہراساں کرنے کی کوشش کی گئی۔کابل ایئرپورٹ پرافغان حکام نے جہازسے مسافروں کو اترنے کی اجازت بھی نہیں دی اور طیارے میں سوار ایک سو باسٹھ مسافرمحصور ہوگئے۔ترجمان پی آئی اے کا کہنا ہے کہ ایئرپورٹ اتھارٹی نے طیارے کا وزن کم کرنے کا کہا لیکن قومی ایئرلائن کے کپتان نے مو¿قف اختیار کیا کہ کسی مسافر کو چھوڑ کرنہیں جاو¿ں گا، بحث کے بعد کابل ایئرپورٹ اتھارٹی نے ون ٹائم اڑان کی اجازت دی اور متعصبانہ رویہ اختیارکرتے ہوئے چھوٹا رن وے استعمال کرنےکی ہدایت کی تاہم رن وے سے امارات اور فلائی دبئی کےبڑےطیارے معمول کےمطابق اڑان بھرتے رہے۔دوسری جانب کابل میں پی آئی اے کے طیارے کو روکے جانے کے معاملے پر ذرائع نے کہا ڈھائی گھنٹے بعد پی آئی اے طیارے کواڑان بھرنےکی اجازت دی ، معاملہ پاکستانی حکام کے سفارتی چینلز کے ذریعے اٹھانے کےبعد حل ہوا۔ذرائع کے مطابق پاکستانی حکام نے معاملہ افغان قیادت کےساتھ استنبول میں اٹھایا، افغان قیادت استنبول میں ہارٹ آف ایشیاکانفرنس کےلئے موجودہے، جس کے بعد پی آئی اے کا طیارہ تمام162مسافروں کے ہمراہ اسلام آباد روانہ ہوا۔

Facebook Comments

POST A COMMENT.